Aghaz-E-Aftaab آغاز-ی-آفتاب

ان کی اجلی ہوئی زندگی کو دیکھ کر ہم نے منہ موڑ لیا
یہ سوچ کے۔۔۔!

اجلا ہوا شخص ہمیں کیا سلجھے گا۔

Un Ki Uljeeh Hoi Zindagi Ko Dekh K Hum Ne Mu Mor Lia
Ya Soch K..!

Uljah Huwa Shakhs Hamain Kya Suljahy Gaa.

Writer Mr Moiz

دیکھا آنکھوں نے خط لکھا ہاتھوں نے پیر چل کے گئے خط دینے

جس نے دیکھا اس نے لکھا نہیں جس نے لکھا وہ گیا نہیں

اب جب چوٹ لگی دل پہ تو آنسو نکلے آنکھوں سے

DeKha AnKho Ne KhaAt Likha HaTo Ne Pair ChAl K Gay KhaAt DeNy..!

JiS Ne DeKhA UsNe LeKhA NaHi JiS Ne LiKhA Wo GaYa NaHi..!

Ab JaB ChOt LaGi Dil Pe ..! Tu AnSu NeKly AnKho Sy..*

Writer Mr_Moiz

اس بات کا دکھ نہیں کہ وہ کیوں چلے گئے!

دکھ تو اس بات کا ہے..!
اگر انہیں جانا ہی تھا تو وہ آئے کیوں.!

رائٹر معیز


Is Bat Ka Dukh Nahi K Wo Kyun Chaly Gay !

Dukh To Is Bat Ka Hai…!
Agar Unhe Jana He Tha To Wo Aay Kyun.!

Writer Mr_Moiz

تم سے محبت اس حد تک ہے
تم سے بچھڑے زمانے ہو گئے

لیکن
عدالات میں مقدمہ-ی-مہبت آج بھی چل رہا ہے۔
رائیٹر معیز

Tum Say Muhabbat Is Had Tak Hai.
Tum Say Bechray Zamany Ho Gay.

Lekin
Adalat Main Muqadma-e-Muhabbat Aj Bhi Chal Raha Hai.

Writer Mr_Moiz

لوگوں سے کیا گلا!
ہم سے تو بارش کی بھی دشمنی ہے!

تب تب برستی ہے !
جب جب دل أداس ہوتا ہے!

رائیٹر معیز

Logo Say Kia Gila!
Hum Say To Barish Ki Bhi Dushmani Hai !!

Tab Tab Barasti Hai
Jab Jab Dil Udas Hota Hai…!

Writer Mr_Moiz

مت کہو انہیں بے وفا!
وہ بے وفا نہیں!

یارو۔۔۔!

محبت ھم کرتے ھیں!
وہ نہیں!

رائٹر معیز

Mat Kaho Unhe Bewafa!
Wo Bewafa Nahi!

Yaroo….!

Muhabbat Hum Karty Hain!
Wo nahi!

Writer Mr_Moiz

تم سے محبت اس حد تک ہے!

” کے”

اپنے ہی محفل میں اپنے ہی “رقیب” کو پہلی ہی صف میں بٹھا دیتے ہیں

رائٹر معیز

Tum Sy Muhabbat Is Had Tak Hai !

“K”

Apne He Mehfil Main Apne He Raqeeb Ko Pheli Hi Saf Main Betha Detain Hain.

Write Mr. Moiz

سر قلم کر دیا گیا بیچ سڑک میں۔

قتل-ی-محبت جو تھا
سازا تو ملنی ہی تھی۔

رائٹر معیز

Sir Kalam Kar Dia Gaya Beech Sadak Main

Qatal-E-Muhabbat Jo Tha Saza To Milne He Thin

Writer Mr.Moiz

7 thoughts on “Aghaz-E-Aftaab آغاز-ی-آفتاب

    1. Raqeeb is “when you love a person, so, any other person near and dear to your love.. is your raqeeb”
      Your love being the center, the other person who is close, dear and near to him, will be your raqeeb.

      ‘Saf’ a row in any kind of congregation

      Hope it is explained well..🙂

      Liked by 1 person

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.